گیلی راتوں کی انوکھی یادیں

گیلی راتوں کی انوکھی یادیں

    by -
    0 0
    A view of Rakaposhi

    ،بارش کی رات ہے اور بوندیں مسلسل گری جا رہی ہیں۔ مون سون کے آغاز کی بارش ہے۔ چھتوں، کھڑکیوں  تاروں، درختوں، گھر کے آنگن سب کچھ دُھلا جا رہا ہے۔ ایسی گیلی راتوں میں بچپن سے لے کر جوانی تک کے اہم واقعات ایسے ذہن میں چلنے لگتے ہیں جیسے بارش کی پہلے کچھ قطروں سے کچی مٹی کی خوشبو ہر طرف پھیل جاتی ہے۔

    چار دنوں سے بارش مسلسل برس رہی تھی۔ ہنزہ میں بہار کا موسم بہہ گیا تھا۔ چیری، سیب، آڑو سمیت سب پودوں کے پھول تیز دھار قطروں نے شہید کر دیے تھے۔ سڑکوں پر پانی ڈھلوانوں سے بہتا تھا۔ کرنے کو کچھ نہیں تھا صرف بارش اور بارش اور فرصت۔ ہوٹل کے کمرے میں تو کبھی سڑکوں پر بھیگتے ہوئے دن گزر رہے تھے۔ کریم آباد سے اُتر کر بارش میں بھیگتا میں علی آباد کے بازار میں آ گیا تھا۔ ناٹکو کے اڈے کے سامنے واقع ایک چھوٹے سےچائے کے ہوٹل میں جا کر بیٹھ گیا۔ باہر بارش برسی جا رہی تھی اور ہوٹل کے شیشے سے دھندلی سی راکاپوشی کی چوٹی نظر آ رہی تھی۔ بیٹھے بیٹھے میں پتہ نہیں کتنے چائے کے کپ پی گیا تھا۔

    میرے بچپن کا کچا مکان اس میں جلتی لالٹین کہ جس کی پھیکی روشنی نے مجھے لفظوں کے باطن میں اترنے کا حوصلہ بخشا۔ گُم صم گلیوں میں کھیلتی ہوئی آوارہ دھوپ، جس نے مجھے اداس راتوں کے پر ہول سناٹوں سے الجھنے کا سلیقہ سکھایا۔ چاندنی راتوں میں چھت پر پڑے تارے شمار کرنے کا شغل اور دیواروں سے ڈھلتی ہوئی چاندنی کہ جو رائیگاں ہونے کی بجائے میرے خوابوں کا اثاثہ بن گئی۔ دھول میں لپٹی ہوئی ہَوا جو میرے مسلسل سفر کی اکیلی گواہی بن کر مجھے دلاسہ دیتی رہی۔ سنہری صبحیں، گونگی دوپہریں، بہری شامیں اور اندھی راتیں کتنی ہی کہانیوں کو بُنتے بُنتے راکھ ہو گئیں ۔ کیسے کیسے دوست ملے اور بچھڑتے گئے۔ اب ان کہانیوں کا کوئی بھی سرا میرے پاس نہیں سب میرے ماضی کے پاس گروی ہیں۔ ایسی کتنی ہی بارشیں برس برس کر گزر چُکی اور ان میں بھیگے ہوئے کتنے ہی جسم رزقِ خاک ہو گئے جو بچ گئے وہ رزق کی تلاش میں پتہ نہیں کہاں کہاں سرکرداں ہیں۔

      راکاپوشی کی چوٹی اب غائب ھو چکی تھی ھوٹل میں رش لگ گیا تھا۔ سبھی مقامی لوگ چائے پینے آ بیٹھے تھے۔ پہاڑوں میں لوک داستانیں بڑی مشہور ہوتی ہیں اور لوگ بھی عقیدت سے ان پر یقین رکھتے اور سناتے ہیں۔ ایک بھیگے ہوئے بابا جی میرے سامنے آ کر بیٹھ گئے۔ بارش پر بات شروع ہوئی تو بولے پہاڑی لوگوں کا خیال ہے کہ اونچے پہاڑوں پر درختوں میں کُرلا کُرلی (ایک پرندے کا نام) ایسی برساتوں میں انڈے دیتے ہیں۔ کُرلا کُرلی کو کسی انسان نے نہیں دیکھا۔ کچھ لوگ بیان کرتے ہیں کہ ان کے پر سفید اور چونچ لال ہوتی ہے۔ مجھے یہ پرندے بھی عنقا کی طرح افسانوی معلوم ہوتے ہیں۔ انہوں نے داستان جاری رکھی۔ جب انڈے دے دیے جاتے ہیں تو کُرلی کا جسم اتنا گرم ہو جاتا ہے کہ مسلسل سات دن کی بارش میں نہا کر نارمل ہوتا ہے۔ پہلے سات دن کُرلی انڈوں پر بیٹھتی ہے اور کُرلا بارش میں بھیگتے ہوئے دانہ تلاش کرتا ہے پھر جھڑی ٹوٹ جاتی ہے اور جب کُرلی گھونسلے سے باہر نکلتی ہے بارش پھر سے ہونے لگتی ہے۔

    گھر میں بیٹھے ان گیلی راتوں میں کیا کیا یاد آنے لگتا ہے۔ 

    دل نے ہمارے بیٹھے بیٹھے کیسے کیسے روگ لگائے
    تُم نے کسی کا نام لیا اور اپنی آنکھ میں آنسو آئے 

    Syed Mehdi Bukhari
    A landscape photographer based in Sialkot, Pakistan. A network engineer by profession and a traveller, poet, photographer and writer by passion.

    NO COMMENTS

    Leave a Reply