ہاٹ ایئر بیلون فیسٹیول

ہاٹ ایئر بیلون فیسٹیول

    by -
    0 78

    یورپ کی سب سے بڑی معیشت رکھنے والا ملک جرمنی اپنے ثقافتی اور سماجی ایونٹس کی وجہ سے بھی دنیا بھر میں شہرت رکھتا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق جرمنی کے مختلف شہروں میں منائے جانے والے تہواروں اور فیسٹیولز کی تعداد 10 ہزار سے زائد بنتی ہے۔
    بون شہر بھی اس روایت میں پیچھے نہیں ہے۔ صرف موسم گرما میں ہی اس شہر میں 100 سے زائد تہوار اور فیسٹیول منعقد کیے جاتے ہیں۔ ان  فیسٹیولز کی تفصیل بون شہر کی ویب سائٹ پر دستیاب ہوتی ہے۔ انہی میں سے ایک ہاٹ ایئر بیلون فیسٹیول بھی ہے۔

    یہ فیسٹیول تین روز تک جاری رہتا ہے۔ اس موقع پر دریائے رائن کے کنارے واقع پارک رائے نو میں مختلف جھولے اور دیگر تفریحات کا بھی انتظام ہوتا ہے۔ آپ پوری فیملی کے ساتھ اس پارک میں پورا  دن گزار سکتے  ہیں۔ کھانے پینے کے اسٹالز بھی یہاں موجود ہوتے ہیں۔ بلکہ ایک حصہ خاص اسی مقصد کے لیے مختص ہوتا ہے۔

    ہاٹ ایئر بیلون فیسٹیول ویڈیو

    اس فیسٹیول کا اصل فیچر یعنی ہاٹ ایئر بیلون سہ پہر کے وقت آپ دیکھ سکتے ہیں جب خصوصی گاڑیوں پر موجود ان غباروں کو بڑے سے گراؤنڈ میں لے جایا جاتا ہے اور انہیں اڑانے کی تیاری شروع ہوتی ہے۔

    اگر آپ اس میں سواری کا لطف اٹھانا چاہتے ہیں تو فیسٹیول سے قبل ہی آپ ان کی ویب سائٹ پر بکنگ کرا سکتے ہیں۔  150 سے 175 یورو  میں  آپ قریب ایک گھنٹے تک جاری رہنے والی اس پرواز سے لطف اندوز ہو سکتے ہیں۔

    عام طور پر ایک ہاٹ ایئر بیلون کی لمبائی یا اونچائی 70 فٹ تک ہوتی ہے یعنی ایک سات منزلہ عمارت کے برابر۔ نائیلون یا ڈیکرون نامی میٹیریل سے بنے اس غبارے یا اینویلپ کا پھیلاؤ یا قطر  55 فٹ تک ہوتا ہے۔ ایک ہاٹ ایئر بیلون کا وزن بمع فیول اور سواریاں 450 سے 600 پاؤنڈز تک ہوتا ہے۔ دوران پرواز غبارے میں موجود ہوا سمیت مکمل ہاٹ ایئر بیلون کا وزن ڈھائی ٹن تک ہوتا ہے۔ اس میں عام طور پر تین سے چار لوگ پرواز کر سکتے ہیں۔

    ہاٹ ایئر بیلون کے لیے چار سے پانچ لوگوں کی ٹیم درکار ہوتی ہے جو اسے پھُلانے سے لے کر اس کی پرواز اور پھر زمین پر واپس اترنے کے بعد اسے دوبارہ تہہ کرنے وغیرہ کا کام انجام دیتی ہے۔

    اینویلپ میں ہوا کو گرم کرنے سے پہلے ایک خاص تیز رفتار پنکھے کے ذریعے اس میں ہوا بھری جاتی ہے۔ جب یہ غبارہ کافی حد تک پھول جاتا ہے تو پھر اس کے اندر موجود ہوا کو خصوصی برنر کی مدد سے گرم کرنے کے عمل کا آغاز ہوتا ہے۔

    جیسے جیسے ہوا گرم  ہوتی جاتی ہے یہ غبارہ ہوا میں اٹھنا شروع ہو جاتا ہے جس سے اس سے منسلک گنڈولا بھی سیدھا ہو جاتا ہے اور یوں اس پرواز کا آغاز ہوتا ہے۔

    مزے کی بات یہ ہے کہ اس میدان میں بھی خواتین مردوں سے پیچھے نہیں ہیں۔ مثلاﹰ یہ غبارہ بظاہر نرم ونازک نظر آنے والی یہ خاتون اڑا رہی ہیں۔

    بیلون فیسٹیول کے دوران جب بہت سے غبارے یکے بعد دیگرے فضا میں بلند ہوتے ہیں تو یہ نظارہ بھی قابل دید ہوتا ہے۔ تمام تر غبارے روایتی گول شکل کے ہی نہیں ہوتے بلکہ بعض بہت دلچسپ شکلوں کے بھی ہوتے ہیں۔

    Afsar Awan
    Afsar Awan is multimedia Journalist, writer and hobby photo & videographer.

    NO COMMENTS

    Leave a Reply